آذربائیجان اور آرمینیا عارضی جنگ بندی پر تیار، روس نے آمادہ کرلیا

شیئر کریں:

آذربائیجان اور آرمینیا کے درمیان دو ہفتے سے جاری لڑائی کے بعد عارضی جنگ بندی ہو گئی ہے۔
اس عارضی جنگ بندی کا اعلان روس کی سربراہی میں 10 گھنٹے جاری مزاکرات کے بعد کیا گیا۔
آذربائیجان اور آرمینیا کے وزرائے خارجہ ماسکو روس کی دعوت پر گزشتہ روز ماسکو پہنچے تھے۔

روس نے دونوں ملکوں سے فوری طور پر جنگ روکنے کی اپیل کرتے ہوئے ثالثی کی پیشکش کی تھی۔
27 ستمبر سے جاری لڑائی کے بعد یہ پہلا موقع ہو گا کہ توپ خانے مقامی وقت 12 بجے سے خاموش ہوں گے۔
ناگورنو قرہباخ پر ہونے والی لڑائی میں 350 سے زائد افراد ہلاک اور ہزاروں زخمی ہو چکے ہیں۔

اس دوران بڑی تعداد میں لوگ بے گھر اور نقال مکانی پر بھی مجبور ہوئے۔
عارضی جنگ بندی کو امن کی جانب اہم پیش رفت قرار دیا جارہا ہے۔
اگر دونوں جانب سے اس دوران ایک دوسرے پر حملے نہ کیے گئے تو پھر دیرپا امن کے لیے مزاکرات
کا دور شروع ہو جائے گا۔

ناگورنو قرہباخ اصولی طور پر آذربائیجان کا حصہ ہے اور عالمی برادری بھی یہی سمجھتی ہے۔
اسی علاقے پر دونوں ملکوں کے درمیان پہلے بھی شدید لڑائی ہوئی تھی اور 1994 میں طے پایا تھا
کہ اس کا انتظام آرمینیائی نسل کے آباد افراد کے ہاتھوں میں ہوگا۔


شیئر کریں: