February 11, 2020 at 7:40 pm

ملک کے عوام کو ایک شہر سے دوسرے لانے اور لے جانے کے لیے کیی بس سروس کام کر رہی ہیں۔

متعدد سروسز میں سے ایک “فیصل موور” بس سروس بھی ہے۔ میں نے بھی اس مرتبہ اپنی گاڑی کے بجائے فیصل موور پر اکتفا کیا۔ خراب موسم کی وجہ سے ڈرائیو نہ کرنے کا فیصلہ کیا۔

یہ بس سروس فیض آباد سے بھی چلتی ہے تو آفس سے فاصلہ قریب ہونے پر اسی بس میں سفر کو منتخب کیا۔

ڈیڑھ بجے اسٹاپ پر پہنچے تو گاڑی نکل چکی تھی اگلی 2 بجے نکلنے والی بس کا ٹکٹ لیا اور پھر مقررہ وقت سے 3 منٹ کی تاخیر سے لاہور کا سفر شروع کیا۔

ٹکٹ کاآونٹر نے بتایا تھا کہ ساڑھے چار گھنٹے میں لاہور پہنچا دے گی لیکن راستے میں مزید رکنے سے متعلق آگاہ نہیں کیا۔

بہرحال بس اپنے 26 نمبر چنگی والے مرکزی اڈے پر رکی اور یہاں سے بھی مسافر بٹھائے۔

اس طرح یہیں 2:50 ہو گئے اور راستے بھیرہ اسٹاپ سے پہلے پھر دو مرتبہ رک گئی۔

اسٹاپ تو مسئلہ بنے ہی لیکن راستے میں مسافروں کی سہولت کے لیے موجود نوعمر اسٹیورڈ کسی بھی قسم کے تربیت سے عاری نظر آیا۔

میرا اس بس کیں سفر کا پہلا اتفاق ہوا، اس سے پہلے جب بھی سفر کیا تو ڈیوو سروس سے استفادہ کیا۔ ڈیوو میں اس طرح کی صورت حال کا سامنا کبھی نہیں کرنا پڑا۔

فیصل موور کے بظاہر نو عمر اسٹیورڈ کا مسافروں سے برتاؤ کسی طور بھی قابل برداشت نہیں۔ میرے ساتھ ہی نشست پر بیٹھے اپنے جیسے نو عمر بچے کو بیل نجانے پر ڈانٹ دیا۔

بچے نے کہا بھائی مجھے وائی فائی کنیکٹ کردو، جواب دیا خود کرلو۔ کیا یہی تربیت ہے؟

کسی اور نے اپنی حاجت کے لیے بیل بجائی تو موصوف نے فرمایا اب کوئی بیل نہیں بجائے گا۔ بیل کس لیے لگائی گئی ہے؟ کیا یہ مسافروں کی سہولت کے لیے نہیں لگائی؟

مسافروں نے پیاس بجھانے کے لیے پانی طلب کیا تو موصوف گویا ہوئے پانی ختم ہو گیا۔
جب موصوف سے کہا گیا بھیرہ پر نا رکی تھی تو پانی لے لینا چاہیے تھا۔

برا مناتے ہوئے یکدم انتہائی سمت لہجے جواب دیا مجھے انتظامیہ نے جو دیا وہ ختم ہو گیا، میں اپنی جیب سے کیوں خریدوں!

اگر شکایت کرنی ہے تو سامنے لکھے ہوئے واٹس ایپ نمبر کر دیں۔
پھر کہا اور کچھ!!! فیصل موور انتظامیہ یہ کیا ہے؟

بھیرہ سے پہلے ہی پانی ختم ہو چکا تھا کیا بھیرہ سے پانی نہیں لینا چاہیے تھا؟

فیصل موور براہ کرم بس میں دیے جانے والے اپنے ریفریشمنٹ پر بھی ایک نظر مار لیں۔
فیصل موور بس میں وائی فائی کا کہہ کر مسافروں کو اس سہولت سے کیوں محروم رکھا گیا ہے؟

پانی کی طرح بگاڑ بھی ہمیشہ اوپر سے ہی نیچے آتا ہے۔ لمبے سفر پر بس کے عملہ کا رویہ انتہائی اہمیت کا حامل ہوتا ہے۔

وقت کی پابندی قائداعظم کا رہنما اصول ہے آپ نے ساڑھے 4 گھنٹے کہہ کر سوا 5 گھنٹے میں لاہور پہنچایا۔

مسافروں کو ایک بار تو دھوکا دے سکتے ہیں لیکن دوسری بار نہ صرف وہ بلکہ وہ دوسرے مسافروں کو بھی فیصل موور میں سفر کرنے سے منا کرے گا۔

اختتامی اعلان!
خواتین و حضرات آپ کا بہت شکریہ کہ آپ نے ہمارے ساتھ سفر کیا۔ ہمیں امید ہے آئندہ بھی ہمارے ساتھ ہی سفر کریں گے۔

تحریر متاثرہ فیصل موور

Facebook Comments