March 25, 2020 at 7:55 pm

تحریر: اویس اسلم

ضلع رحیم یارخان میں سابق حکومت نے چارسال قبل قبرستانوں کی چار دیواری، پختہ راستوں،جناز گاہوں کی تعمیر اور سٹریٹس لائٹس نصب کرنے کے خصوصی منصوبہ کا آغاز کرتے ہوئے ایک ارب روپے کے فنڈز مختص کئے جن میں سے ابتدائی طور پر جاری ہونیوالے 60فیصد فنڈز سے متعدد منصوبے شروع کئے گئے مگرموجودہ حکومت کے آنے کے بعد سے بقیہ فنڈز کی فراہمی نہ ہونے کی وجہ سے کئی قبرستانوں میں لائٹنگ،جناز گاہوں کی تعمیر و دیگر نوعیت کے کام کئی ماہ سے تعطل کا شکار ہیں اور یہ طوالت اب تک ہونیوالے تعمیراتی کاموں کے نقصان کا باعث بن رہی ہے اور تخمینہ لاگت میں بھی اضافہ کا خدشہ ہے،اس ضمن میں انتظامیہ بھی عدم توجہی کا مظاہرہ کر رہی ہے رحیم یار خان میں موجود قبرستان اور جناز گاہ کی تعمیر کا کام چار سال قبل شروع ہوا جس میں ابتدائی طور پر مرکزی عیدگاہ میں ٹف ٹائلز پختہ چار دیواری اور لائٹس کیلئے پول لگائے گئے لیکن فنڈز نہ ملنے کی وجہ سے مزید تعمیراتی کام ٹھپ ہو گئے ضلعی انتظامیہ کے مطابق 2016 میں ملنے والے فنڈز سے قبرستانوں کی چار دیواری سمیت لائٹس اور جنازگاہ کی تعمیر و مرمت کا کام. شروع کیا گیا رحیم یارخان میں موجود 8 قبرستانوں کی چار دیواری کی گئی لیکن رحیم یارخان شہر میں موجود 30 سے زائد قبرستانوں میں تعمیر کا کام فنڈز جاری نہ ہونے سے تعطل کا شکار ہے ایک ارب سے شروع ہونے والے اس خصوصی منصوبے کے تحت ضلع بھر میں کے قبرستانوں کی تعمیر کا کام ہونا تھا جس کی ابتدا تحصیل رحیم یار خان سے کی گئی جبکہ اب بھی بیشتر قبرستان سمیت جنازگاہ ایسی موجود ہیں جن کی نہ تو چار دیواری ہے اور نہ ہی وہاں پر لائٹس کا انتظامات ہے جے یو پی کے راہنما ریاض نوری نے بتایا کہ انتظامیہ کی قبرستانوں کی حالت بہتر بنانے کی طرف بارہا توجہ دلوائی گئی لیکن انتظامیہ کی جانب سے اس بارے کوئی اقدامات نہیں کئے جا رہے سیوریج کا پانی قبرستانوں میں کھڑا ہونے سے قبروں کی بے حرمتی سمیت لوگوں کو بھی مشکلات کا سامنا ہے ضلعی انتظامیہ کے افسر نے بتایا کہ فنڈز کے نہ ملنے کی بڑی وجہ یہ ہے کہ بلدیاتی نظام میں تبدیلی اور میونسپل کارپوریشن بننے کے بعد فنڈز کی فراہمی اور منصوبے پر لاگت کی کوئی ایس او پیز نہیں بن رہی گزشتہ حکومت کی جانب سے خصوصی منصوبے کا آغاز کیا گیا جس میں ہنگامی بنیادوں پر قبرستانوں میں پختہ راستوں کی فراہمی اور لائٹس لگانا شامل تھا لیکن انتظامیہ کی جانب سے چند قبرستانوں کی طرف توجہ دی گئی ضلعی انتظامیہ کے مطابق میونسپل کمیٹی کی جانب سے تعمیراتی کام کروائے جارہے تھے ایڈمنسٹریٹر رحیم یار خان نے حکومت پنجاب کی جانب سے مہیا کئے جانیوالے بجٹ سے کام شروع کروائے جبکہ میونسپل کمیٹی کے سابقہ چیئر مین میاں اعجاز احمد نے بتایا کہ گزشتہ حکومت نے بجٹ فراہم کیا جس پر قبرستانوں اور عیدگاہوں میں ہنگامی بنیادوں پر کام شروع کروائے گئے لیکن حکومت تبدیل ہونے پر بلدیاتی نظام کو ختم کرنے کی وجہ سے تعمیراتی کام مکمل طور پر بند ہو گیا ہے بلدیہ رحیم یارخان کے ورکس اینڈ پلاننگ ڈپارٹمنٹ کا کہنا ہے کہ محدود بجٹ ملا اور اس کے بعد حکومت کی عدم توجہی کے باعث مزید کام نہیں ہو سکے

Facebook Comments